Home  
    Mayor  
    Deputy Mayor  
    Metropolitan Commissioner  
    Departments  
    KMC Directory  
    Photo Gallery  
    Video Gallery  
       
 
 
       
    Tender Information  
    KMC Function  
    Tenders  
    Grand Auctions  
    Section 144 CR.P.C  
    Notifications  
    KMC Resolution  
       
 
 
       
    Public Notice  
    Information  
    National Holidays  
    Prayer Timings  
    Archive  
       


 
 
 
 
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے جمعہ کی شام کے ایم سی بلڈنگ میں سٹیزن کمپلینٹ انفارمیشن سسٹم (1339)کی اپ گریڈیشن کا افتتاح کیا-  
     
  06-Oct-2017  
     
   
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ سٹیزن کمپلینٹ انفارمیشن سسٹم (1339) کو بحال کرنے کا مقصد کراچی کے شہریوں کو ان کے مسائل کے حل کے سلسلے میں مختلف شہری اداروں اور منتخب نمائندوں تک رسائی فراہم کرنا ہے تاکہ شہری اچھی زندگی گزار سکیں،ہمارا مقصد سسٹم کو بہتری کی طرف لے کر جانا ہے جب تک تمام حقائق سامنے نہیں لائیں گے حالات بہتر نہیں ہوسکتے،1339 کی بحالی ایک بڑا چیلنج تھا جس کے ذریعے عوام کے توسط سے متعلقہ اداروں پر ایک پریشر بنے گا اور ان کی کارکردگی سامنے آئے گی، ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کی شام کے ایم سی بلڈنگ میں سٹیزن کمپلینٹ انفارمیشن سسٹم (1339)کی اپ گریڈیشن کا افتتاح اور بعدازیں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا، اس موقع پر سابق صوبائی وزیر اور رکن صوبائی اسمبلی فیصل سبزواری، چیئرمین ضلع شرقی معید انور، وائس چیئرمین ضلع کورنگی سید احمر علی، سٹی کونسل میں پارلیمانی لیڈر اسلم شاہ آفریدی، چیئرمین آراضیات کمیٹی سید ارشد حسن، چیئرمین قانونی امور کمیٹی عارف خان ایڈوکیٹ، چیئرمین مالیات کمیٹی ندیم ہدایت ہاشمی، چیئرپرسن فمیڈیا مینجمنٹ کمیٹی صبحین غوری، میونسپل کمشنر اور مشیر مالیات ڈاکٹراصغر عباس شیخ، محکمہ جاتی سربراہان اور دیگر افسران بھی موجود تھے، میئر کراچی نے کہا کہ 2013 ء کے بلدیاتی ایکٹ کے بعد فرائض سنبھالنے والے میئر اور ڈپٹی میئر اور تمام دیگر منتخب نمائندوں کے لئے عوامی مسائل کے حل کی صورت میں ایک بڑا چیلنج درپیش تھا مگر ہم محدود وسائل اور اختیارات کے ساتھ آگے بڑھ رہے ہیں اور ہر شعبے میںبہتری لانا چاہتے ہیں، اگر اس ایکٹ پر اس کی روح کے مطابق عمل ہوا ہوتا اور بلدیاتی اداروں کو قانون کے مطابق فنڈز ملے ہوتے تو مسائل حل نہ ہونے پر احتجاج اور اعتراض سمجھ میں آتا مگر جب ساری تصویر سامنے آچکی اور بلدیاتی نمائندوں کے اختیارات وسائل اور ان کی راہ میں کھڑی جانے والی رکاوٹوں کے بارے میں جان لیا گیا تو پھر اصل بات سب کی سمجھ میں آجانی چاہئے انہوں نے کہا کہ موجودہ حالات میں اگرچہ ہم فی الحال اس سے درگزر کرسکتے تھے مگر ہم نے سٹیزن کمپلینٹ انفارمیشن سسٹم (1339)کو بحال کرنے کا چیلنج قبول کیا کیونکہ عوامی مسائل کے حل کی طرف مقتدر اداروں کی توجہ مبذول کرانے کے لئے ایسا کرنا لازمی تھا، اب ہم جو شکایات موصول ہوں گی انہیں من و عن میڈیا اور عوام کے سامنے لائیں گے، جس سے کے ایم سی اور دیگر شہری اداروں کی کارکردگی سامنے آئے گی، دنیا بھر میں اسی طرح کام ہوتا ہے تاکہ جو افسر یا ذمہ دار شکایات پر توجہ نہ دے اسے تبدیل کرکے اہل افسر لایا جاسکے، میئر کراچی نے کہاکہ ہم کراچی کو پھر سے بنانے کی کوشش کر رہے ہیں گزشتہ 9 سال کے بگاڑ اور سابقہ ایڈمنسٹریٹرز کے کارنامے سامنے آتے ہیں تو حیرانی ہوتی ہے کہ کیا ان لوگوں کا تعلق اس شہر سے نہیں تھا، گزشتہ ادوار میں گھوسٹ ملازمین، جعلی اسکیمیں اور ادائیگیوں کا بوجھ ادارے پر ڈال کر محکموں کو تباہ کیا گیا جہاں تک ہوسکا ہم نے فوڈ ڈپارٹمنٹ کو بہتر بنایا اور اب فائربریگیڈ کو ٹھیک کر رہے ہیں جبکہ مختلف جگہوں پر ہونے والے کرپشن کو جڑ سے اکھاڑنے کے اقدامات کئے اور بہت سے افسران و ملازمین کو فارغ کیا، انہوں نے کہاکہ 1339 کی بحالی کے بعد منتخب نمائندوں اور محکمہ جاتی افسران کا اس میں بہت اہم کردار ہوگا کہ وہ موصولہ شکایات پر فوری ایکشن لیں اور عوامی مسائل حل کریں، میئر کراچی نے کہا کہ ہم اس طرح ان محکموں کی مدد کر رہے ہیں جن کا تعلق مختلف شہری خدمات کی فراہمی سے ہے تاکہ ان کی کارکردگی بہتر ہو، ہمارا کام شکایات کو ان کا پہنچانا اور اسے مانیٹر کرنا ہے کیونکہ ہم چاہتے ہیں کہ لوگوں کو تکلیف نہ ہو اور ان کے مسائل جلد از جلد حل ہوں، قبل ازیں رکن صوبائی اسمبلی فیصل سبزواری نے اپنے خطاب میں کہا کہ 1339 کے ذریعے میئر کراچی ، ڈپٹی میئر کراچی، منتخب بلدیاتی نمائندے اور ایم کیو ایم اپنے آپ کو عوام کے سامنے پیش کر رہی ہے، 1339 کے ذریعے عوام کو یہ سہولت فراہم کی جا رہی ہے کہ وہ اپنے مسائل حل کرنے کے لئے منتخب نمائندوں تک رسائی حاصل کرسکے، انہوں نے کہا کہ 9 سال قبل بھی 1339 موجود تھا مگر اس وقت میں اور آج حال میں بہت فرق ہے انہوں نے کہا کہ مختلف لوگ یہ بات کرتے ہیں کہ میئر اختیارات کا رونا روتے ہیں ہم انہیں یہ بتانا چاہتے ہیں کہ یہ اختیارات کا رونا نہیں ہے بلکہ یہ شہر کا نوحہ ہے ہمارے ساتھ کوئی آواز سے آواز بھی نہیں ملاتا اور نہ ہی آئین پر عملدرآمد کرانے کے لئے بات کرتا ہے انہوں نے کہا کہ 1339 اب جدید دور میں مکمل اور جدید ترین سسٹم کے ساتھ فعال کیا گیا ہے جہاں موصول ہونے والی شکایات خودکار نظام کے تحت متعلقہ شکایتی بکس میں پہنچ جائیں گی جہاں سے وہ متعلقہ محکموں تک پہنچیں گی اور پھر ان پر عملدرآمد کو مسلسل چیک کیا جائے گا اور اس کی رپورٹ میڈیا اور عوام کے سامنے رکھی جائے گی، آئی ٹی کنسلٹنٹ دانیال احمد خان نے بتایا کہ 1339 چوبیس گھنٹے تین شفٹوں میں کام کرے گا ، اس کمپلینٹ سینٹر میں لوگ خود آکر بھی شکایات درج کراسکتے ہیں جبکہ فون کالز ، ویب اور سوشل میڈیا کے ذریعے بھی شکایات درج کرائی جاسکتی ہیں۔  
     
     
 
News Photo Gallery
 
 
 
 
 
 
 
 
 

 
     
     

 

 

 

 

 
 
     
 

Copyright © 2011-2012 Karachi Metropolitan Corporation. All rights reserved.
The KMC will not be responsible for the content of external internet sites. / Login  / Webmail  / Webmail 2  / 1339 Executive Dashboard